غزل ۔۔۔۔۔۔۔ عفراء بتو ل سحر

غزل۔۔
عفراء بتو ل


کون ہوتا  ہے تھکن  سے  چور مجھ میں
جی  رہا  ہے  کون  سا  مزدور  مجھ میں

میرا مجھمیں تو کہیں کچھ بھی نہیں ہے
پھر نظر آتا  ہے کس  کا  نور  مجھ میں

سلسلہ  جاری  ہو  جیسے  صوفیوں کا
ہے  فقیروں کا  نشہ بھر پور  مجھ میں

تک  رہی ہیں  دور تک  مجھ کو نگاہیں
کون  ہوتا  جا  رہا  ہے  دور   مجھ میں

آج  بھی سانسیں اصولوں  پر  ٹکی ہیں
نبھ  رہا ہے کون  سا  دستور  مجھ میں

کس عقیدت  سے  مجھے وہ  دیکھتا ہے
کیا  نظر  آتی ہے کوئی حور  مجھ میں

جب  پکارا  دل  سے  اس  کو  آ گیا  وہ
بس گیا ہے اب تو جیسے طور مجھ میں

چھو  لیا  جس  کو   معطر   ہو  گیا  وہ
کیا  رچایا  ہے  کوئی  کافور   مجھ میں

جانتے   ہیں   اجنبی    بھی    نام   میرا
کیا ہے  ایسا  دل  بتا   مشہور  مجھ میں

زندگی  کی   شام   ڈھلتی  جا   رہی ہے
گھل رہا ہے  دیکھئیے سندور  مجھ میں

کیا ہوا جو چھین لیں ہیں آنکھیں اس نے
اب بھی باقی ہے ذرا سا  نور  مجھ میں

بے  وجہ  جو   جسم   میرا   ڈولتا  ہے
کوئی ہستی ہے سحر مخمور مجھ میں
•••••••••••••••••
عفراء بتول سحر
عفراء بتول سحر
Share on Google Plus

About Md Firoz Alam

Ut wisi enim ad minim veniam, quis nostrud exerci tation ullamcorper suscipit lobortis nisl ut aliquip ex ea commodo consequat. Duis autem vel eum iriure dolor in hendrerit in vulputate velit esse molestie consequat, vel illum dolore eu feugiat nulla facilisis at vero eros et accumsan et iusto odio dignissim qui blandit praesent luptatum zzril delenit augue duis.

0 تبصرے:

ایک تبصرہ شائع کریں