حضور اشرف الاولیاء قدس سرہ بانی مخدوم اشرف مشن ۔۔ مولانا سفیر مصباحیM. Safir Misbahi

*🌹حضور اشرف الاولیا قدس سرہ🌹*
بانی مخدوم اشرف مشن، پنڈوہ شریف
(١٣٤٦ھ———١٤١٨ھ)


تحریر 🖊: مولانا سفیر مصباحی۔۔۔

چودھویں صدی ہجری کی ایک عبقری شخصیت، خانوادہء اشرفیہ کے چشم و چراغ، زینۃ الاتقیا، سیدالاذکیا، اشرف الاولیا، ابو الفتح سید محمد مجتبیٰ اشرف اشرفی الجیلانی قدس سرہ العزیز کی ذات والا صفات، منبع فیوض و برکات تھی.... آپ ایک ولی کامل، مرشد برحق اور حضور تاج الاصفیا، سید شاہ مصطفی اشرف علیہ الرحمہ کے علمی و روحانی جانشیں تھے..

*خاندانی وجاہت:* خاندانی اعتبار سے آپ کا تعلق علم و فضل، کشف و کرامت والے گھرانے سے ہے، آپ کے والد محترم حضور تاج الاصفیا سید شاہ مصطفٰی اشرف کچھوچھوی علیہ الرحمہ، صاحب فضل و کمال اور فائق الأقران تھے،، اور آپ کے جد امجد شیخ المشایخ سید شاہ اعلی حضرت اشرفی میاں، ایک متبحر عالم دین، صاحب کشف و کرامت، خدا رسیدہ بزرگ اور مرجع خلائق تھے...اسی طرح آپ کا پورا گھرانہ، حق آگاہ اور خدا ترس تھا..

*ولادت باسعادت:* ٢٦/ربیع الآخر ١٣٤٦ھ مطابق ٢٣/اکتوبر ١٩٢٧ء کو کچھوچھہ مقدسہ میں آپ کی ولادت با سعادت ہوئی..

*تعلیم و تربیت:* خاندانی دستور کے مطابق جب آپ کی عمر چار سال چار ماہ چار دن کی ہوئی تو حضور تاج الاصفیا نے مدرسہ اشرفیہ کچھوچھہ میں نابغہ روزگار اساتذہ کے سپرد کیا، آپ نے پورے انہماک کے ساتھ تعلیم کا آغاز فرمادیا، ابتدائی تعلیم سے لے کر شرح جامی تک کی تعلیم کچھوچھہ ہی میں حاصل کی اور اعلی تعلیم کے لیے ١٢/شوال المکرم ١٣٦٠ھ کو ہندوستان کی سب سے بڑی دانش گاہ الجامعۃ الاشرفیہ مبارک پور میں داخلہ لیا، آپ نے اشرفیہ میں حضور حافظ ملت علامہ عبدالعزیز محدث مرادآبادی، علامہ عبدالمصطفی اعظمی علامہ عبدالرؤف بلیاوی اور مولانا سلیمان اشرف بھاگلپوری رحمۃ اللہ علیہم اجمعین جیسے جلیل القدر اساتذہ سے تحصیل علوم کیا اور تمام مروجہ علوم و فنون میں مہارت حاصل کی اور شعبان المعظم میں جامعہ اشرفیہ سے دستار و سند فضیلت حاصل کر کے بحیثیت معین المدرسين منتخب ہوئے، آپ کا شمار الجامعۃالاشرفیہ کے قابل فخر فرزندوں میں ہوتا ہے...

*بیعت و خلافت:* حضور اشرف الاولیا قدس سرہ العزیز جب سن رشد کو پہنچے تو آپ کے باطنی کمالات کو دیکھتے ہوئے اسی وقت آپ کے جد امجد حضور اعلی حضرت اشرفی میاں علیہ الرحمہ نےسلسلہ عالیہ قادریہ نقشبندیہ اشرفیہ میں آپ کو بیعت کیا اور اجازت و خلافت عطا فرمائی...

حضور اشرف الاولیا علیہ الرحمہ نے جامعہ اشرفیہ سے فراغت کے کچھ ہی عرصہ بعد دعوت وتبلیغ اور طریقت و ارشاد کا میدان اپنایا،اس میں بھی انھوں نے ایسے علاقوں کا انتخاب کیا جو جہالت کے گھپ اندھیرے میں تھے، یوپی، بہاراور بنگال کے ان خطوں کی جانب توجہ کی جہاں کسی عالم، خطیب، مرشد اور پیر کا گزر کم ہی ہوتا تھا، عموماً ان جگہوں میں جو لوگ ملتے وہ علم و دولت سے تہی دامن ہوتے، باشعور طبقہ تک اسلام کا پیغام پہنچانا آسان ہوتا ہے لیکن ناخواندہ یا کم خواندہ طبقے کو علم و فضل سے آراستہ کرنا اور ان تک اسلام کے احکامات پہنچانا بہت مشکل گزار مرحلہ ہوتا ہے لیکن حضور اشرف الاولیا نے مسلسل جدوجہد اور پیہم کوششوں سے اپنی دعوت وتبلیغ کے ذریعے انھی اعرابیت زدہ بنجر علاقوں کو اسلام کی قدروں سے آشنا کر دیا اور اپنی پوری زندگی انھی علاقوں میں گزار دی...

آپ نے اپنی تبلیغ کے ذریعے بہت سے بد عقیدوں کو سنی صحیح العقیدہ بنایا، دین سے بھٹکے ہوئے انسانوں میں دین اسلام کی شمع فروزاں کی اور بہت سے بے دین کو داخل دین اسلام کیا..

*مخدوم اشرف میشن کا قیام:*
حضور اشرف الاولیا نے قوم مسلم کی فلاح و بہبود کے لیے متعدد مکاتب، مدارس، مساجد اور جامعات کی بنا ڈالی... بے شمار فلاحی تنظیموں اور تحریکوں کی سرپرستی فرمائی اور اصلاح و تزکیہ نفس کے لیے ملک و بیرون ملک کے بہت سے علاقوں میں خانقاہوں کا قیام بھی فرمایا، آپ کے قائم کردہ اداروں میں جس کو شہرت دوام حاصل ہوئی وہ مخدوم اشرف مشن پنڈوہ شریف ہے..

پنڈوہ شریف ایک زمانے میں علم و حکمت کا مرکز تھا جہاں سات سو علماےکرام ایک ساتھ مخدوم العالم کی بارگاہ میں زانوئے ادب تہہ کیا کرتے تھے لیکن بدلتے دن کے ساتھ حالات بھی بدلتے رہے، دھیرے دھیرے اسلامی تعلیمات کی جگہ کفرو شرک کے رسومات نے لے لی تھی، مسلمان کفر و شرک سے قریب ہوگئے تھے اور عقائد حقہ سے دور و نفور اختیار کر چکے تھے، ایسے حالات میں حضور اشرف العلما نے پنڈوہ شریف کو اپنی دعوت کا محور بنایا اور باطل قوتوں سے مقابلہ کرنے کے لیے ١٢ /شوال المکرم ١٩٩٣ء کو "الجامعۃ الجلالیۃ العلائیۃالاشرفیۃ" معروف بہ مخدوم اشرف مشن کی بنیاد رکھی..

مخدوم اشرف مشن کے در و بام میں حضور اشرف الاولیا کا خون جگر اور خلوص وللّٰہیت اور حضرت شیخ علاء الحق پنڈوی علیہ الرحمہ کی آغوش کا فیضان شامل ہے؛ اسی وجہ سے اتنی قلیل مدت میں یہ ادارہ شہرت کی اس منزل پر پہنچ چکا ہے کہ اب اس کا شمار بر صغیر ہند و پاک کے ممتاز اداروں میں ہونے لگا ہے...

*وصال:* اپنی پوری زندگی دینی و ملی، تبلیغی و تعلیمی خدمات میں گزارنے کے بعد، خانوادہء اشرفیہ کا یہ چشم و چراغ دنیاے سنیت کو سوگوار کر کے بروز جمعہ *٢١/ذی القعدہ ١٤١٨ھ مطابق ٢٠/مارچ ١٩٩٨ء* کو ہمیشہ کے لیے رخصت ہوگئے... إنا لله وإنا إليه راجعون

ہر سال حضور اشرف الاولیا، (بانی مخدوم اشرف مشن، پنڈوہ شریف) کے عرس کے موقع پر جب آپ کے ارادت مند اپنے اپنے طور پر خراج عقیدت پیش کر رہے ہوتے ہیں، اسی موقعے پر آپ کے تعلیمی و تنظیمی مشن کو آگے بڑھانے والے طلبا و اساتذہء مخدوم اشرف مشن بھی اپنے محسن کی یاد میں Founder Day (یوم مؤسس) مناتے ہیں..اس تقریب میں قرآن خوانی، اوراد و وظائف کے ذریعے آپ کی روح کو ایصال ثواب کیا جاتا ہے اور خصوصی طور پر ہر سال بڑے تزک و احتشام کے ساتھ سالانہ انعامی مقابلہ کا انعقاد کیا جاتا ہے.. رواں سال ١٩-٢٠١٨ء میں بھی عرس اشرف الاولیا کے حسین موقع پر طلبائے مخدوم شرف مشن کے درمیان ١٤واں سالانہ خطابتی، مکالماتی، مدحی و منقبتی مقابلہ جات کے ساتھ حفظ احادیث اور اسلامی سوالات کے مقابلہ جات منعقد ہونے جا رہے ہیں، جس میں طلبا اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لائیں گے.... رب تعالیٰ سے دعاگو ہوں کہ یہ سلسلہ اسی طرح قائم رہے اور مخدوم اشرف مشن ہمیشہ خطوطہاے اشرف الاولیا پر گامزن رہے!!!

*التماس:* کل یعنی ٣/اگست جمعہ کا دن گزار کر رات ١١ بج کر ٣ منٹ پر آپ کا وقت وصال ہے، لہذا تمام سربراہان و اساتذہ و طلباے مدارس اور آئمہء مساجد سے التماس ہے کہ دنیاے سنیت کے اس عظیم محسن کے نام ضرور ایصال ثواب کریں...

(مصادر : ماہنامہ غوث العالم کا اشرف الاولیا نمبر، اگست ٢٠٠٧ء..
اشرف الاولیا---حیات و خدمات، از: مفتی کمال الدین اشرفی مصباحی)

از ✏ : سفیر مصباحی
استاد مخدوم اشرف مشن پنڈوہ شریف،مالدہ، مغربی بنگال
١٩/ذی القعدہ ١٤٣٩ھ
Share on Google Plus

About Md Firoz Alam

Ut wisi enim ad minim veniam, quis nostrud exerci tation ullamcorper suscipit lobortis nisl ut aliquip ex ea commodo consequat. Duis autem vel eum iriure dolor in hendrerit in vulputate velit esse molestie consequat, vel illum dolore eu feugiat nulla facilisis at vero eros et accumsan et iusto odio dignissim qui blandit praesent luptatum zzril delenit augue duis.

0 تبصرے:

ایک تبصرہ شائع کریں