قربانی کا تحفہ ۔۔۔ محمد شمس تبریز قادری علیمی M.Shams Tabrez

قربانی کا تحفہ


ازقلم:محمدشمس تبریزقادری علیمیؔ۔(چیف ایڈیٹر:قلم کی جسارت)صدرمفتی :قادری دارالافتاء ،دارالعلوم کلیمیہ رضویہ،مالدہ۔مغربی بنگال۔7001063703

قربانی کی تعریف:مخصوص جانورکومخصوص دن میں اللہ کاقرب حاصل کرنے اورثواب پانے کی نیت سے ذبح کرناقربانی ہے۔ (بہارشریعت۔الدرالمختار،ج،۹،ص۴۵۲) 

دوسری ہجری میں قربانی کی مشروعیت ہوئی۔(سیرت مصطفی) 

حدیث۱۔ابوداؤد ،ترمذی،ابن ماجہ ام المومنین عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہاسے راوی کہ حضوراقدس صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایاکہ قربانی کے دنوں میں انسان کاکوئی عمل خداکے نزدیک خون بہانے (قربانی کرنے)سے زیادہ پیارانہیں اوروہ جانورقیامت کے دن اپنے سینگ اوربال اورکھروں کے ساتھ آئے گااورقربانی کاخون زمین پرگرنے سے قبل خداکے نزدیک مقامِ قبول میں پہنچ جاتاہے لہذااس کوخوش دلی سے کرو۔حدیث ۲۔طبرانی حضرت امام حسن بن علی رضی اللہ عنہماسے راوی کہ حضورنے ارشادفرمایاجس نے خوشی دل سے طالب ثواب ہوکرقربانی کی وہ آتش جہنم(دوزخ کی آگ) سے حجاب (رکاوٹ)ہوجائے گی۔حدیث ۳۔طبرانی عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہماسے راوی کہ حضورنے فرمایاجوروپیہ عیدکے دن قربانی میں خرچ کیاگیااس سے زیادہ کوئی روپیہ پیارانہیں۔حدیث ۴۔ ابن ماجہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے راوی کہ حضوراکرم ﷺ نے فرمایاجس میں وسعت (مالک نصاب )ہواورقربانی نہ کرے وہ ہماری عیدگاہ کے قریب نہ آئے۔مسئلہ۱۔مسلمان ،مقیم،مالک نصاب،آزاد،بالغ پرقربانی واجب ہے۔ (بہارشریعت) جس مسلمان کے پاس حاجت اصلیہ( یعنی انسان کوزندگی گزارنے کے لئے جن چیزوں کی ضرورت پڑتی رہتی ہے جن کے بغیروقت گزارنانہایت دشوارہو۔جیسے رہنے کامکان ،گھریلوسامان،سواری کی گاڑیاں،خادم،روزمرہ استعمال ہونے والے کپڑے،مطالعہ والی کتب،اوزاروغیرہ)کے علاوہ ساڑھے باون تولہ چاندی یاساڑھے سات تولہ سونا،یاساڑھے باون تولہ چاندی (653گرام 184ملی گرام)کی مالیت کے برابرکسی بھی قسم کے مال کامالک ہواوراس پرقرض نہ ہو۔ قرض سے مرادایساقرض جومکمل ایک ساتھ اداکرنا پڑے ،لیکن بینک سے لیاہوالون جوقسط واراداکیاجاتاہے اس میں صرف اتنے روپے کوگھٹاناہے جوقربانی کے دنوں میں بطورقسط اداکرناہے۔

مسئلہ۲۔جس مسلمان کے پاس دوموبائل یالیپ ٹاپ (اس دوسرے موبائل یالیپ ٹاپ کی قیمت موجودہ وقت میںتقریباً45000)یادوگاڑیاں ہوں توقربانی واجب ہے۔(بہارشریعت) 

مسئلہ۳۔جس مسلمان کے پاس بقدرنصاب چاندی ،سونا،مالِ تجارت اوربینک بیلنس نہ ہوبلکہ صرف کھیتی کی زمین ہوجس کی قیمت بقدرِنصاب بلکہ کئی گُنازیادہ ہوجائے تواس پربھی قربانی واجب ہے کیونکہ کھیتی کی زمین حاجتِ اصلیہ میں داخل نہیں ۔(فتاویٰ فیض الرسول ،ج،۲،ص۴۴۲)

مسئلہ۴۔ باپ کے ساتھ ان کے لڑکے ،اورچندبھائیوں میں سے ہرکوئی مالک نصاب ہوتوہرایک پرقربانی واجب ہے۔(بہارشریعت،فتاویٰ فیض الرسول ج،۲،ص۴۳۹)

مسئلہ۵۔جو مسلمان مالک نصاب ہولیکن نقدروپیہ نہ ہوتواسے قرض لے کرقربانی کرنے کاحکم ہے۔مسئلہ۶۔ اس لاک ڈاؤن میںجس پر قربانی واجب ہے تووہ قربانی ہی کرے، الگ سے صدقہ وخیرات کرناچاہے توکرسکتاہے ۔قربانی کےجانورکی قیمت صدقہ کرناکافی نہیں ورنہ گنہگارہوگا۔(عالمگیری)مسئلہ۷۔ کوئی صاحب نصاب قربانی کی منت مان لے تواس کے ذمہ دوقربانیاں واجب ہیں،ایک منت کی اوردوسری صاحب نصاب ہونے کی ۔

مسئلہ۸۔ تین قسم کے جانورکی قربانی دی جاتی ہے۔اونٹ کم سے کم پانچ سال کی عمرکا،گائے اورگائےہی میں بھینس بھی شامل ہے توگائے کی جتنی قسمیں ہیں بیل،گائے ،بھینس،بھینساان سب کی عمرکم سے کم دوسال ہو،بکری اپنی تمام قسموں کے ساتھ ،کم سے کم ایک سال عمرکی ہو،اس سے کم عمرکی قربانی نہیں ہوگی۔(بہارشریعت وغیرہ)

مسئلہ ۹۔ جوقیمت کے اعتبارسے اعلیٰ ہواورخوب فربہ ہواس کی قربانی افضل ہے۔

مسئلہ۱۰۔ ہرن اورنیل گائے کی قربانی جائز نہیں ہے جرسی گائے کی قربانی جائزہے۔

مسئلہ۱۱۔اگرکسی شہرمیں جنگ،شورش،کرفیو،فساد،طوفان اورسیلاب وغیرہ کی وجہ سے قربانی کاجانورموجودنہ ہو یابہت تلاش کے باوجودنہ ملے توبڑے جانورکے ساتویں حصے کی قیمت صدقہ کرے۔(ردالمحتار)

قربانی کاطریقہ: پہلے جانورکوچارہ ،پانی دیں ،اورجانورکوگرانے سے پہلے چھری اچھی طرح تیزکرلیں،جانورکے سامنے تیزنہ کریں،جانورکوبائیں پہلوپراس طرح لٹائیں کہ اس کامنہ قبلہ کی جانب ہواوراپناداہناپاؤں اس کے داہنے پہلوپررکھ کریہ دعاپڑھ کرتیزچھری سے جلدذبح کردے۔دعا:اِنِّیْ وَجَّھْتُ وَجْھِیَ لِلَّذِیْ فَطَرَ السَّمٰوٰتِ وَالاَرْضَ حَنِیْفاً وَّمَااَنَامِنَ الْمُشْرِکِیْنَ إِنَّ صَلاتِیْ وَنُسُکِیْ وَمَحْیَایَ وَمَمَاتِیْ لِلّٰہِ رَبِّ الْعَالَمِیْنَ لاَشَرِیْکَ لَہٗ وَبِذٰلِکَ اُمِرْتُ وَاَنَامِنَ الْمُسْلِمِیْنَ اَللّٰھُمَّ لَکَ وَمِنْکَ بِسْمِ اللہ  اَللہ اَکْبَرُ‘‘۔قربانی اپنی طرف سے ہوتوذبح کے بعدیہ دعاپڑھے’’اَللّٰھُمَّ تَقَبَّلْ مِنِّیْ کَمَاتَقَبَّلْتَ مِنْ خَلِیْلِکَ إِبْرَاھِیْمَ عَلَیْہِ السَّلامُ وَحَبِیْبِکَ مُحَمَّدٍﷺ‘‘اگرقربانی دوسرے کی طرف سے ہوتو’’مِنِّیْ‘‘کی جگہ ’’مِنْ‘‘کہہ کراس کانام لے۔

اگرچندلوگ شریک ہوں توآسانی کے لیے قربانی سے پہلے اس طرح کاخاکہ بنالیں:

(۱)۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابن؍بنت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(۲)۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابن؍بنت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(۳)۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابن؍بنت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(۴)۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابن؍بنت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(۵)۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابن؍بنت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(۶)۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابن؍بنت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(۷)۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابن؍بنت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حسب ِفرمائش:حضرت مولانامحمدفیروزعالم علائی۔ایڈیٹر:قلم کی جسارت۔

متعلم :کلکتہ یونیورسٹی۔(CU)دینی مسائل کے لئے آپ اس یوٹیوب چینل کوضرور

سبسکرائب کرلیں اوربیل آئی کن کوپریس کریں۔ALAYEE NETWORK
Share on Google Plus

About Md Firoz Alam

Ut wisi enim ad minim veniam, quis nostrud exerci tation ullamcorper suscipit lobortis nisl ut aliquip ex ea commodo consequat. Duis autem vel eum iriure dolor in hendrerit in vulputate velit esse molestie consequat, vel illum dolore eu feugiat nulla facilisis at vero eros et accumsan et iusto odio dignissim qui blandit praesent luptatum zzril delenit augue duis.

0 تبصرے:

ایک تبصرہ شائع کریں